Friday , 26 April 2019
Home / National News / اسفندیار ولی خان کی صدارت میں عوامی نیشنل پارٹی کے مرکزی کابینہ کا غیر معمولی اجلاس۔

اسفندیار ولی خان کی صدارت میں عوامی نیشنل پارٹی کے مرکزی کابینہ کا غیر معمولی اجلاس۔

[pukhto]چارسدہ (بیورو رپورٹ) اسفندیار ولی خان کی صدارت میں عوامی نیشنل پارٹی کے مرکزی کابینہ کا غیر معمولی اجلاس۔ پاک افغان کشیدگی ، سی پیک منصوبہ ، مر دم شماری ، پانامہ لیکس ، نیشنل ایکشن پلان ، افغان مہاجرین اور پارٹی کی تنظیمی امور پر تفصیلی غور و خوض ۔ وزیر اعظم میاں نواز شریف کے خلاف ابھی جرم ثابت نہیں ہو ا مگر بعض قوتیں ان کو سزا دینا چاہتی ہے ۔ دنیامیں ایسا کوئی قانون نہیں کہ جرم ثابت کئے بغیر ملزم کو سزا دی جائے ۔ عمران خان کا نام بھی آف شور کمپنیوں میں شامل ہے مگر ثابت کئے بغیر ان کو مجرم نہیں ٹھہرایا جا سکتا ۔ میاں افتخارحسین ۔ تفصیلات کے مطابق ولی باغ چارسدہ میں اسفندیار ولی خان کی صدارت میں اے این پی کے مرکزی کابینہ کا اجلاس منعقد ہوا۔ اجلاس میں سنیٹر ز باز محمد خان ، شاہی سید ، زاہد خان ، بشیر خان مٹہ ، جمیلہ گیلانی ، بشری گوہر ، ارباب طاہر ، واجد علی خان ، شمس بونیری ، ریاض اے شیخ ، کا ملہ خان ، غلام احمد بلور ، امیر نواب اور لالہ اورنگزیب نے شرکت کی ۔ اجلاس میں پا ک افغان کشیدگی ، سی پیک منصوبہ ، مر دم شماری ، پانامہ لیکس ، نیشنل ایکشن پلان ، افغان مہاجرین اور پارٹی کی تنظیمی امور پر تفصیلی غور و خوض ہوا۔ اجلاس کے بعد میڈیا سے بات چیت کر تے ہوئے پارٹی کے مرکزی جنرل سیکرٹری میاں افتخار حسین نے کہا کہ اجلا س میں تمام ایشوز پر طائرانہ نظر ڈال کر تفصیلی غور و حوض کیا گیا اور کل باچاخان مرکز میں کونسل کے اجلاس کے بعد اسفندیا ر ولی خان پارٹی کے آئندہ لائحہ عمل کا اعلان کرینگے ۔ میاں افتخار حسین نے کہا کہ اجلاس میں کوئٹہ ، مر دان اور مہمند ایجنسی کے شہداء کیلئے حصوصی دعا کی گئی ۔ میاں افتخار حسین نے کہاکہ اے این پی جمہوریت ، جمہوری اداروں اور قومیتوں کے حقوق کی جنگ لڑرہی ہے ۔ اے این پی عدم تشدد کے راستے پر گامزن رہ کر پختونوں اور دوسرے محروم قومیتوں کے حق کیلئے جنگ جاری رکھے گی ۔ انہوں نے کہاکہ بدقسمتی سے آج بھارت ، افغانستان اور ایران سے پاکستان کے تعلقات انتہائی کشیدہ ہو چکے ہیں۔ اے این پی کو پاکستان کا مفاد سب سے زیادہ عزیز ہے ۔ اے این پی سمجھتی ہے کہ پڑوسی ممالک مل بیٹھ کر باہمی تنازعات مذاکرات سے حل کریں اور پاکستان و پڑوسی ممالک کے حکومتیں اپنے توانائیاں عوام کے فلاح و بہبود پر صرف کریں۔ میاں افتخار حسین نے عمران خان کے رائے ونڈ مارچ کے حوالے سے کہاکہ عمران خان بجکانہ فیصلے کر رہے ہیں ۔ دنیا کی تاریخ میں ابھی ایسا کوئی قانون نہیں بنا کہ ملزم کو بغیر کسی ثبوت کے سزا دی جائے ۔ بد قسمتی سے عمران خان وزیر اعظم نوازشریف کو بغیر کسی تحقیق اور ثبوت کے سزا دینا چاہتے ہیں مگر عمران خان یہ بھول رہے ہیں کہ ان کا نام بھی آف شور کمپنیوں میں شامل ہیں مگر کوئی عمران خان کو سزا دینے کی بات نہیں کر رہا ۔ اے این پی پانامہ لیکس کے حوالے سے وزیر اعظم نواز شریف سمیت تمام لوگوں کے احتساب کا حامی ہے مگر مکمل تحقیق اور ثبوت کے بغیر کسی کو سزا دینے کے خلاف ہے ۔ میاں افتخار حسین نے مہمند ایجنسی کے واقعہ پر میڈیا کے کر دار پر شدید تنقید کی اور کہا کہ کر اچی میں ایک شحص کی گرفتاری کو چالیس پختونوں کی شہادت پر فوقیت دی گئی ۔ ایسے امتیازی سلوک پر ہم خاموش نہیں رہ سکتے ۔ انہوں نے کہاکہ نیشنل ایکشن پلان پر من و غن عمل در آمد اور سی پیک منصوبہ میں خیبر پختونخوا کے حق کے لئے آخری دم تک لڑینگے ۔ افغان مہاجرین کو جس عزت سے پاکستان لایا گیا تھا ان کو اسی طرح عزت دیکر اپنے وطن بھیجنا ہو گا ورنہ دونوں اقوام کے مابین نفرتیں بڑھے گی ۔ [/pukhto]

Check Also

انسانیت سوز واقعہ نے انسانیت کے سر شرم سے جھکا دئیے ۔لڑکی نے منگنی ٹوٹنے پر سابق منگیتر کے دو بچوں کو قتل کر دیا ۔

شیخو پورہ میں انسانیت سوز واقعہ نے انسانیت کے سر شرم سے جھکا دئیے ۔شیخو …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *