Tuesday , 23 July 2019
Home / Urdu News / کم عمر رکشہ ڈرائیور کورات بھر حوالات میں الٹا لٹکایا گیا ۔

کم عمر رکشہ ڈرائیور کورات بھر حوالات میں الٹا لٹکایا گیا ۔

[pukhto]

قانون کے رکھوالوں کی قانون شکنی ۔ پڑانگ پولیس نے کم عمر رکشہ ڈرائیور کو ناکردہ گناہ کے پاداش میں ساری رات حوالات میں الٹا لٹکا کر بدترین تشدد کا نشانہ بنایا ۔ پانچ ہزار روپے رشوت نہ دینے پر کم عمر طالب علم کے خلاف 107کا پرچہ کاٹ دیا ۔ تفصیلات کے مطابق خٹ کلے سے تعلق رکھنے والے کم عمر رکشتہ ڈرائیور حسن ولد جابر نے میڈیا سے بات چیت کر تے ہوئے کہا کہ گزشتہ روز وہ مہمانوں کو لیکر عابد خان کے حجرے میں لے گئے اور مہمانوں کی واپسی کا انتظار کر رہے تھے کہ اس دوران پڑاڈ و گاڑی میں سوار تھانہ پڑانگ پولیس کے ایس ایچ اواور پولیس موبائل میں دیگر اہلکار عابد خان کے حجرے میں داخل ہو گئے ۔انہوں نے کہاکہ ایس ایچ او کے حکم پر ان کو موبائل گاڑی میں ڈال کر تھانے میں بند کیا گیا اور ہتھکڑیاں پہنا کر الٹا لٹکا کر بد ترین تشدد کا نشانہ بنایا ۔ انہوں نے کہا کہ پولیس ان سے پانچ ہزار روپے رشوت کا مطالبہ کر تے رہے مگر غربت اور لاچاری کی وجہ سے وہ پیسے ادا کرنے سے لاچار تھے۔ اس دوران ان کی والدہ کو خبر ہو گئی اور وہ بھی تھانے پہنچ گئی اور پولیس حکام کی منت سماجت شروع کی مگر پولیس حکام نے ان کی والدہ کی ایک نہ سنی ۔ انہوں نے کہاکہ ساری رات بدترین تشدد کے بعد ان کو ناکر دہ گناہ کے پاداش میں 107کے مقدمہ میں چالان کیا گیااور گھر میں موجود جمع پونجی عدالت کچہری کے نظر ہو گئی ۔ قانون کے مطابق 18سال سے کم عمر ملزم کو رات بھر تھانے میں رکھنا ہر لحاظ سے غیر قانونی ہے مگر قانون کے رکھوالوں کی قانون شکنی کا کیا پوچھنا ۔ متاثرہ کم عمر ڈرائیور نے آئی جی خیبر پختونخوا صلاح الدین محسود سے داد رسی اور انصا ف کا مطالبہ کیا ۔ [/pukhto]

Check Also

خوست جامع مسجد میں دھماکہ۔ 28 افراد جان بحق 38 زخمی۔

افغانستان میں خوست میں واقعہ آرمی کے جامع مسجد میں نماز عصر کے دوران زور …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *