Wednesday , 12 December 2018
Home / National News / عوامی نیشنل پارٹی کو باچا خان کی بد دعا لگ گئی ۔ ولی خان اسفندیار ولی کو پارٹی صدارت دینے کے سخت مخالف تھے ۔ فرید طوفان ۔

عوامی نیشنل پارٹی کو باچا خان کی بد دعا لگ گئی ۔ ولی خان اسفندیار ولی کو پارٹی صدارت دینے کے سخت مخالف تھے ۔ فرید طوفان ۔

سابق صوبائی وزیر و تحریک انصاف کے صوبائی راہنماء فرید طوفان نے کہا ہے کہ اسفندیار ولی خان اورعوامی نیشنل پارٹی کو با چا خان اور ولی خان کی بد دعا لگ گئی ہے ،اسفندیار ولی کے پاس اپنی گاڑی تک نہ تھی مگر موصوف آج کروڑوں روپے مالیت کے حویلی میں قیام پذیر جبکہ دوبئی اور ملائشیاء میں کاروبار کر رہے ہے۔دوبئی میں آصف زرداری کے ساتھ تیسرا بنگلہ اسفندیار ولی خان کی ملکیت ہے ۔ولی خان نے اپنی زندگی میں اسفندیار ولی خان کو جھوٹا اور بد یانت قرار دیکر پارٹی صدارت نہ دینے کی ہدایت کی تھی ،وہ چارسد ہ پریس کلب کے نو منتخب کابینہ کو مبارک باد دینے کے بعد پروگرام میٹ دی پریس میں اظہار خیال کر رہے تھے ،فرید طوفان نے کہا ہے کہ ججز اور جرنیلو ں سمیت سب کا بلا امتیاز اور بے رحمانہ احتساب وقت کا تقاضا ہے ،ٹیکنو کریٹ یا مارشل لاء حکومت وطن عزیز کو مزید اندھیروں میں ڈبو دے گا ،پاکستان افغانستان کو اپنی کالونی سمجھ کر ڈیکٹیٹ کرنا چاہتا ہے جو بین الاقوامی اصولوں اور افغان رویات کے سراسر خلاف ہے،انہوں نے کہا ہے کہ وہ پی پی پی میں شامل ہونا چاہتے تھے اور اس حوالے سے بیظیر بھٹو سے ملاقات بھی کی تھی جس میں بے نظیر بھٹو نے افغانستان سے بہتر تعلقات کے لئے مجھے ٹاسک دیا تھا مگر بد قسمتی سے وہ دنیا سے چلی گئی ،خورشید شاہ اور رضا ربانی نے بعد ازاں اسفندیار ولی خان کی ایماء پر پی پی پی میں میرے شمولیت کا راستہ روکا ،فرید طوفان نے انکشاف کیا کہ ولی خان جب کوما میں تھے تو اسفندیار ولی خان نے صوبائی تنظیموں کو ولی خان کی بیمار پرسی سے روکا اور خود بھی ولی خان کی عیادت سے گریز کرتے رہے ۔فرید طوفان نے مزید کہا ہے کہ نصف صدی تک عوامی نیشنل پارٹی سے وابستہ رہے اور ولی خان اور باچا خان کی خوب خدمت اور تیمار داری کی لیکن اسفندیار ولی خان نے ان کو ناکردہ گناہ کی سزا دی ہے ۔اعظم ہوتی اور حیدر ہوتی نے مل کر ایک سازش کے تحت بیگم نسیم ولی خان کو علیحدہ پارٹی بنانے پر مجبور کیا ،لیکن بعد ازاں میرے کہنے پر بیگم نسیم ولی خان دونوں پارٹیوں کے انضمام پر راضی ہو گئی ۔اسفندیار ولی خان نے نواز شریف دور میں حواجہ آصف سے پرمٹ لیکر دوبئی میں نبی بنگش کے ساتھ کاروبار شروع کیا ۔انہوں نے کہا کہ ولی خان نے اسفندیار ولی خان کو جھوٹا اور بد یانت قرار دیکر پارٹی صدارت نہ دینے کی ہدایت کی تھی مگر بعد ازاں نظریہ ضرورت کے تحت اسفندیار ولی خان کو پارٹی صدر بنایا گیا جس پر ولی خان اس وقت اے این پی کے ذمہ داروں پر واضح کیا کہ اب پختون ساری عمر روتے رہے نگے

Check Also

اورکزئی کے کلایا بازار میں زوردار دھماکہ۔10 افراد جان بحق 20 افراد زحمی۔

اورکزئی کے کلایا بازار میں زوردار دھماکہ۔10 افراد جان بحق 20 افراد زحمی۔ اورکزئی کے …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *