Tuesday , 18 September 2018
Home / Education / دیہی علاقوں کے سکولوں میں بچے اور مال مویشاں ایک ہی چھت کے نیچے ۔

دیہی علاقوں کے سکولوں میں بچے اور مال مویشاں ایک ہی چھت کے نیچے ۔

تعلیمی انقلاب اور اصلاحات کے دعوے اور وعدے درست مگر اب بھی دیہی علاقوں کے سکولوں میں بچے اور مال مویشاں ایک ہی چھت کے نیچے ۔ بچوں کیلئے تو باتھ روم اور پینے کا صاف پانی تک میسر نہیں تو تعلیمی ماحول کہاں ؟

ایک سروے رپورٹ کے مطابق ضلع چارسدہ انفراسٹریکچر اور سکولوں میں بنیادی سہولیات کی موجودگی کے حوالے سے ساتویں نمبر پر ہے لیکن اس کے باوجود بھی ضلع چارسدہ میں متعدد سرکاری سکول ایسے ہیں جو سرکاری عمارت سے بھی محروم ہیں ۔ ان سکول میں ایک گورنمنٹ پرائمری سکول دادو کلے ہے جس کی عمارت بوسیدہ ہونے کی وجہ سے محکمہ سی اینڈ ڈبلیو نے سال2016میں ناقابل استعمال قرار دیا تھا جس کے بعد یہ سکول کرایہ کے ایک گھر میں واقع ہے جوصبح کے وقت سکول، لیکن چھٹی ہونے کے بعد گھر کے طور پر استعمال ہوتا ہے ۔ دوسری جانب سکول کے اوقات کار میں بھی سکول میں مال مویشیوں سمیت گھر کا سارا سامان موجود ہوتا ہے ،اس حوالے سے سکول کے اساتذہ کا کہنا ہے کہ وہ پچھلے کئی ماہ سے اس گھر میں سکول چلا رہے ہے جہاں پراس مکان نما سکول میں تعلیمی ماحول تو میسر نہیں لیکن وہ ان بچوں کو تمام تر تکنیکی طریقے بروئے کار لاکر بچوں کوپڑھاتے ہیں اور انہیں معیاری تعلیم دینے کی کوشش کرتے ہیں۔دوسری جانب چارسدہ جرنلسٹ کی جانب سے محکمہ تعلیم کے ضلعی آفیسر سے رابطہ کرنے پر ڈسٹرکٹ ایجوکیشن آفیسر سراج محمد خان نے فوری طورپر سکول کے عمارت کی تعمیر کے لئے 22لاکھ 40ہزار روپے کی رقم جاری کر دی ہے،اس سکول کے حوالے سے مزید تفصیل جانتے ہے سراج علی کی اس رپورٹ میں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

Check Also

محکمہ تعلیم چارسدہ نے مختلف کیڈرز کے پوسٹوں پر تعیناتی کے لئے انٹرویوز کا شیڈول جاری کر دیا

محکمہ تعلیم چارسدہ نے مختلف کیڈرز کے پوسٹوں پر تعیناتی کے لئے انٹرویوز کا شیڈول …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *