Monday , 12 November 2018
Home / Regional News / عمران خان نے طالبان کے ہیڈ کوآرٹر کو 52کروڑ کا عطیہ دیکر پانچ سال حکومت کرنے کی گارنٹی لی تھی ۔

عمران خان نے طالبان کے ہیڈ کوآرٹر کو 52کروڑ کا عطیہ دیکر پانچ سال حکومت کرنے کی گارنٹی لی تھی ۔

دہشت گردی کا نشانہ بن کر شہید ہوگیا تب بھی انتخابی میدان خالی نہ چھوڑیں۔عمران خان نے طالبان کے ہیڈ کوآرٹر کو 52کروڑ کا عطیہ دیکر پانچ سال حکومت کرنے کی گارنٹی لی تھی ۔بعض قوتیں انتخابات ملتوی کرکے مرضی کی حکومت لانا چاہتی ہے جس کے خطرناک ترین نتائج برآمد ہونگے ۔

یار حسین میں بڑے جلسہ عام سے خطاب کر تے ہوئے اے این پی کے صدر اسفندیار ولی خان نے کہا ہے کہ بھٹو دور حکومت میں 300سے زائد افسران کو کرپشن کے الزام میں ملازمتوں سے نکال دیا گیا تھا جس میں عمران خان کے والد اکرام اللہ نیازی بھی شامل تھے مگر موصوف اپنے والد کے کرتوتوں کو بھلا کر مجھ پر کرپشن کے بے بنیاد الزامات لگا رہے ہیں۔ 1993میں بے نظیر بھٹو کی حمایت کرنے کیلئے کروڑوں روپے کی پیشکش ٹکرا ئی تھی اور میرا موقف صرف یہ تھا کہ با چا خان اور ولی خان کے پیرو کاروں کی 100سالہ قربانیوں پر سودا بازی نہیں ہو سکتی ۔ دہشت گرد یاد رکھے کہ اے این پی ڈرنے اور جھکنے والی اور نہ میدان چھوڑنے والی ہے ۔ اے این پی خطے میں امن کی قیام کیلئے مزید ربانیوں سے دریغ نہیں کریگی ۔ دہشت گردی کے پے در پے واقعات کے پس پردہ محرکات سامنے آرہے ہیں اور بعض قوتیں انتخابات ملتوی کرکے مرضی کی غیر منتخب حکومت لانا چاہتی ہے جس کے خطرناک نتائج برآمد ہونگے ۔انہوں نے واشگاف الفاظ میں وصیت کی کہ مجھے بھی دہشت گردی کا نشانہ بن کر شہید کیا گیا تو تب بھی پارٹی انتخابی میدان خالی نہ چھوڑیں۔ ایک پارٹی کے لئے میدان ہموار کرکے جلسے جلوسوں کی اجازت ہے جبکہ باقی پارٹیوں پر پابندی ہے ۔ نگراں حکومتوں کی ذمہ داری ہے کہ وہ عوام کی جان و مال کی خفاظت یقینی بنائیں۔ اسفندیار ولی خان نے مزید کہا کہ عمران خان نے طالبان کے ہیڈ کوآرٹر حقانیہ کو 52کروڑو روپے کا عطیہ دیکر پانچ سال حکومت گارنٹی لی اور پانچ سال حکومت کے بعد دہشت گردی دوبارہ شروع ہو گئی جو ایک سوالیہ نشان ہے ۔

Check Also

بندوق کی زور پر ریاستی رٹ کو تسلیم نہیں کیا جا سکتا ہے ۔ ماسکو میں بات چیت ۔

اسفندیار ولی خان نے ماسکو میں میڈیا سے بات چیت کر تے ہوئے واضح کیا …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *