Monday , 12 November 2018
Home / National News / سپریم کورٹ نے آسیہ مسیح کو باعزت طور پر بری کردیا۔

سپریم کورٹ نے آسیہ مسیح کو باعزت طور پر بری کردیا۔

چیف جسٹس آف پاکستان جسٹس میاں ثاقب نثار کی سربراہی میں جسٹس آصف سعید کھوسہ اور جسٹس مظہر عالم میاں خیل پر مشتمل سپریم کورٹ کے تین رکنی خصوصی بینچ نے توآسیہ مسیح کی درخواست پر فیصلہ سنایا۔سپریم کورٹ آف پاکستان نے توہین رسالت کے جرم میں سزائے موت پانے والی مسیحی خاتون آسیہ مسیح کو ناکافی شواہد کی بناء پر بری کرنے کے احکامات جاری کر دئیے ۔ فیصلے میں کہا گیا کہ آسیہ بی بی ریاست کو دوسرے مقدمات میں مطلوب نہیں تو ان کو فوری طور پر رہا کیا جائے ۔
تین رکنی بینچ نے اپنے فیصلے میں ولی خان یونیورسٹی میں توہین کے الزام میں قتل کیے گئے طالب علم مشال خان سمیت توہین مذہب کے دیگر کیسز کا بھی حوالہ دیا فیصلے میں لکھا گیا کہ مسلمہ قانون اور اصول کے مطابق جو شخص الزام عائد کر تاہے تو اس کو ثابت کرنا بھی اس کی ذمہ داری ہو تی ہے ۔ استغاثہ یعنی دعوی کرنے والے شہری کی ذمہ داری ہوتی ہے کہ وہ کیس کے دوران ملزم کے ارتکاب جرم کوصاف و شفاف طریقے سے ثابت کریں جس میں کوئی شک و شبہ نہ ہو۔
سپریم کورٹ کے فیصلے کے مطابق جہاں کہیں بھی استغاثہ یعنی دعوی کرنے والے شہری کے الزام میں جھول یا شک پایا جا ئے تو اس کا فائدہ ملزم کو دیاجاتا ہے ۔

Check Also

بندوق کی زور پر ریاستی رٹ کو تسلیم نہیں کیا جا سکتا ہے ۔ ماسکو میں بات چیت ۔

اسفندیار ولی خان نے ماسکو میں میڈیا سے بات چیت کر تے ہوئے واضح کیا …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *